Jump to content
URDU FUN CLUB
Sign in to follow this  
Horny Jasmin

مجھے حادثوں نے سجا سجا کے بہت حسیں بنا دیا

Recommended Posts

مجھے حادثوں نے سجا سجا کے بہت حسیں بنا دیا

مرا دل بھی جیسے دلہن کا ہاتھ ہو، مہندیوں سے رچا ہوا

وہی شہر ہے،وہی راستے،وہی گھر ہے اور وہی لان بھی

مگر اس دریچے سے پوچھنا، وہ درخت انار کا کیا ہوا؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

اردو فن کلب کے پریمیم ممبرز کے لیئے ایک لاجواب تصاویری کہانی ۔۔۔۔۔ایک ہینڈسم اور خوبصورت لڑکے کی کہانی۔۔۔۔۔جو کالج کی ہر حسین لڑکی سے اپنی  ہوس  کے لیئے دوستی کرنے میں ماہر تھا  ۔۔۔۔۔کالج گرلز  چاہ کر بھی اس سےنہیں بچ پاتی تھیں۔۔۔۔۔اپنی ہوس کے بعد وہ ان لڑکیوں کی سیکس سٹوری لکھتا اور کالج میں ٖفخریہ پھیلا دیتا ۔۔۔۔کیوں ؟  ۔۔۔۔۔اسی عادت کی وجہ سے سب اس سے دور بھاگتی تھیں۔۔۔۔۔ سینکڑوں صفحات پر مشتمل ڈاکٹر فیصل خان کی اب تک لکھی گئی تمام تصاویری کہانیوں میں سب سے طویل کہانی ۔۔۔۔۔کامران اور ہیڈ مسٹریس۔۔۔اردو فن کلب کے پریمیم کلب میں شامل کر دی گئی ہے۔

مجھے حادثوں نے سجا سجا کے بہت حسیں بنا دیا

مرا دل بھی جیسے دلہن کا ہاتھ ہو، مہندیوں سے رچا ہوا

وہی شہر ہے،وہی راستے،وہی گھر ہے اور وہی لان بھی

مگر اس دریچے سے پوچھنا، وہ درخت انار کا کیا ہوا؟

ohh maar dala zalim :D kia kehny ha

Share this post


Link to post
Share on other sites

آداب آپ کو بھول جائیں ہم ، اتنے تو بےوفا نہیں

آپ سے کیا گلہ کریں آپ سے کچھ گلہ نہیں

شیشہِ دل کو توڑنا اُن کا تو ایک کھیل ہے

ہم سے ہی بھول ہوگئی اُن کی کوئی خطا نہیں

کاش وہ اپنے غم مجھے دے دے تو کچھ سکون ملے

وہ کتنا بدنصیب ہے غم ہی جسے ملا نہیں

Share this post


Link to post
Share on other sites

*اے محبت !

تیری قسمت

کہ تجھے مفت ملے ہم سے دانا

جو کمالات کیا کرتے تھے

خشک مٹی کو امارات کیا کرتے تھے

اے محبت!

یہ تیرا بخت

کہ بن مول ملے ہم سے انمول

جو ہیروں میں تُلا کرتے تھے

ہم سے منہ زور

جو بھونچال اُٹھا رکھتے تھے

اے محبت میری!

ہم تیرے مجرم ٹھہرے ،

ہم جیسے جو لوگوں سے سوالات کیا کرتے تھے

ہم جو سو باتوں کی ایک بات کیا کرتے تھے

تیری تحویل میں آنے سے ذرا پہلے تک

ہم بھی اس شہر میں عزت سے رہا کرتے تھے

ہم بگڑتے تو کئی کام بنا کرتے تھے

اور !

اب تیری سخاوت کے گھنےسائے میں

خلقتِ شہر کو ہم زندہ تماشا ٹھہرے

جتنے الزام تھے

مقسوم ہمارا ٹھہرے

اے محبت !

ذرا انداز بدل لے اپنا

تجھہ کو آئندہ بھی عاشقوں کا خون پینا ہے

ہم تو مر جائیں گے ، تجھ کو مگر جینا ہے

اے محبت !

تیری قسمت

کہ تجھے مفت ملے ہم سے انمول

ہم سے دانا۔۔۔۔۔

اے محبت!

Share this post


Link to post
Share on other sites

سورج کے بہتے خوں سے گلنار ہو گئے ہیں

وہ دھوپ کی صراحی ٹوٹی ہوئی پڑی ہے

پھر شام کی سیاہی دہلیز پر کھڑی ہے

کیا رات ہو گئی ہے

ڈرتے تھے جس سے سارے

وہ بات ہو گئی ہے

مہجور وادیوں میں

متروک راستوں پر

گمنام جنگلوں میں

روتی ہوئی شعاعیں اک خواب بُن رہی ہیں

ظلمت کی د استاں کا اک باب سن رہی ہیں

تیری تلاش میں پھر نکلیں گے چاند تارے

مجھ سے نہ جانے کتنے پھرتے ہیں مارے مارے

Share this post


Link to post
Share on other sites

ہم تو کل بھی کہتے تھے

اپنے عکس کی کالک

دُھل سکے تو دھو ڈالو

...عکس کی صباحت کو

’’ برص ‘‘ چاٹ لیتا ہے

ہم تو کل بھی کہتے تھے

اپنی ٹیڑھی آنکھوں کے

تِرچھے زاویے بدلو

زاویے جو تِرچھے ہوں

مستقیم راہوں کا

کب سُراغ ملتا ہے؟

آئینے کی عظمت سے

اب حقارتیں کیسی؟

عکس سے گُریزاں ہیں

اب بصارتیں کیسی؟

اپنے آپ سے کب تک؟

یوں نظر چراؤ گے

آئینہ جو توڑو گے

خود بھی ٹوٹ جاؤ گے

Share this post


Link to post
Share on other sites

میری موت ہے میری ہمسفر، میری زندگی بھی عجیب ہے

میرے چاروں طرف ہے جلوہ گر، تیری بے رُخی بھی عجیب ہے

میرا درد ہے لبِ آشنا، تیری رنجشوں کے عذاب سے

میرے شعر ہیں میرے چارہ گر، میری دل لگی بھی عجیب ہے

جو ہیں طعنہ زن میری ذات پر، مجھے ان سے کوئی گلہ نہیں

مجھے جان سے وہ عزیز تر، میری دوستی بھی عجیب ہے

میں لہو جگر سے گداز کر، تجھے نقش کرتا ہوں ورق ورق

ہے قلم کی نوک سے مختصر، تیری آگہی بھی عجیب ہے

میں پہر کی تپتی ہواؤں سے، کڑی دھوپ میں کھڑا بے خبر

سرِ راہ گزر تیرا منتظر، میری بے بسی بھی عجیب ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...